کرنل جوزف کو سفارتی استثنی حاصل تھا، امریکا میں مقدمہ چلایا جائے گا، ترجمان دفتر خارجہ

کرنل جوزف کو سفارتی استثنی حاصل تھا، امریکا میں مقدمہ چلایا جائے گا، ترجمان دفتر خارجہ

5/17/2018 8:50:45 PM :شائع کردہ

اسلام آباد: دفتر خارجہ کے ترجمان کا کہنا ہے کہ امریکی دفاعی و فضائی اتاشی کرنل جوزف ایمانوئیل کے خلاف امریکا میں مقدمہ چلایا جائے گا۔ دفتر خارجہ میں ہفتہ وار پریس کانفرنس کے دوران ترجمان ڈاکٹر محمد فیصل نے کہا کہ امریکی سفارتکار کے خلاف پاکستان میں مقدمہ نہیں چلایا جاسکتا تھا کیونکہ انہیں سفارتی استثنیٰ حاصل تھا، اس لیے انہیں اس یقین دہانی کے بعد ملک سے جانے کی اجازت دی گئی کہ ان کے خلاف امریکا میں مقدمہ چلایا جائے گا۔ یاد رہے کہ 7 اپریل کو کرنل جوزف کی گاڑی کی ٹکر سے اسلام آباد کے دامنِ کوہ چوک میں پاکستانی نوجوان عتیق بیگ جاں بحق ہوا تھا۔ واقعے کے بعد اسلام آباد پولیس نے امریکی سفارت خانے کی گاڑی کو تھانہ کوہسار منتقل کیا، تاہم سفارتی استثنیٰ کے باعث ملٹری اتاشی کرنل جوزف کو گرفتار نہیں کیا گیا تھا۔ مقتول کے والد کی مدعیت میں کوہسار پولیس اسٹیشن میں سیکشن 320، 337، 279 اور 427 کے تحت واقعے کی ایف آئی آر درج کی گئی تھی اور کہا گیا تھا کہ واقعہ امریکی سفارتی اہلکار کی غفلت کے باعث پیش آیا۔ واقعے کے بعد کرنل جوزف نے امریکی فوجی جہاز سے ملک سے باہر جانے کی بھی کوشش کی، تاہم ان کی اس کوشش کو وفاقی تحقیقاتی ادارے (ایف آئی اے) نے ناکام بنادیا تھا۔ تاہم تین روز قبل ملک سے جانے کی اجازت کے بعد کرنل جوزف خصوصی طیارے سے افغانستان روانہ ہوگئے تھے۔ ترجمان نے بتایا کہ امریکا میں پاکستانی سفارت کاروں پر سفری پابندیوں کے جواب میں پاکستان نے بھی امریکی سفارت کاروں پر جوابی پابندیاں لگائی ہیں اور اب دونوں ممالک کے سفارتکاروں کو سفارت خانے سے 25 میل سے آگے سفر کرنے کے لیے پیشگی اجازت لینا ہوگی۔ فلسطین تنازع سے متعلق ترجمان کا کہنا تھا کہ پاکستان، اقوام متحدہ کی قراردادوں کے مطابق فلسطین کے تنازع کے دو ریاستی حل پر یقین رکھتا ہے۔ انہوں نے بتایا کہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے خصوصی سربراہ اجلاس میں شرکت کے لیے جمعہ کو ترکی روانہ ہوں گے، جس میں اسرائیلی فوج کے ہاتھوں بے گناہ فلسطینیوں کے حالیہ قتل عام کے واقعات پر غور کیا جائے گا۔